J. Iqbal اسلام آباد: پولیٹیکل ایجنٹ نے بیت اللہ محسود کی ڈرون حملے میں ہلاکت کی تصدیق کر دی ہے۔جبکہ وائٹ ہاوٴس نے مبہم موقف اختیار کیا ہے اور براہ راست تصدیق سے انکار کیا ہے۔ سرکاری نیوز ایجنسی اے پی پی کے مطابق جنوبی وزیرستان کے پولیٹیکل ایجنٹ شہاب علی شاہ نے بیت اللہ محسود کی ہلاکت کے بارے میں وزارت داخلہ کو تصدیق کر دی ہے۔ اورکزئی ایجنسی میں طالبان کمانڈر مفتی کفایت اللہ محسود نے بھی بیت اللہ محسود کی ہلاکت کی تصدیق کی ہے۔بیت اللہ محسود منگل کی رات اس وقت ڈرون حملے میں ہلاک ہوا جب وہ اپنے سسر کے گھرآیا تھا۔ حملے میں بیت اللہ محسود کی بیوی بھی ہلاک ہوئی ہے۔ اے پی پی کے مطابق بیت اللہ محسود کو اس کی وصیت کے مطابق بدھہ کو جنوبی وزیرستان کے گاوٴں مزگوسٹی میں سپر د خاک کر دیا گیا۔ کالعدم تحریک کا سربراہ گردے میں تکلیف کے باعث اپنے سسر اکرام الدین محسود کے گھر میں مقیم تھا۔ بیت اللہ محسود کی ہلاکت کی ابتدائی اطلاعات کے بعد طالبان نے علاقے کو گھیرے میں لے لیا اور مختلف مقامات پر چوکیاں قائم کردی ہیں۔چونتیس سالہ بیت اللہ محسود کو پاکستان کا دشمن قرار دیا گیا تھا۔ دوسری جانب وائٹ ہاوٴس نے کہا ہے کہ بیت اللہ محسود کی ہلاکت کی تصدیق نہیں کر سکتے۔ وہائٹ ہاوٴس کے ترجمان رابرٹ گبس نے واشنگٹن میں صحافیوں سے بات کرتے ہوئے کہا کہ مصدقہ ذرائع میں بیت اللہ محسود کی ہلاکت پر اتفاق پایا جاتا ہے۔ انھوں نے کہا کہ اگر بیت اللہ محسود کی ہلاکت کے حوالے سے رپورٹس درست ہیں تو پاکستان محفوظ ہو گیا ہے۔دوسری جانب مقامی طالبان نے بیت اللہ محسود اور اسکی اہلیہ کی ہلاکت کی تصدیق کردی۔